Ads

Faiz Ahmed Faiz Poetry - Express your feeling with Pakistan’s largest Poetry collection of Pakistani Revolutionary poet Faiz Ahmed Faiz Poetry, Shayari & Urdu Ghazals. Pakistan Revolutionary poet Faiz Ahmed Faiz was born on February 13, 1911, in Sialkot . Faiz Ahmad Faiz was died at the age of 73 on November 20, 1984 in Lahore, Punjab Province. He was a revolutionary poet, and one of the most well-known poets of the Urdu language from Pakistan. Read the latest and best collection of Faiz Ahmed Faiz shayari in Urdu online on Urdughr. You can share your favorite verses from Faiz Ahmed Faiz poetry collection online with your friends and family .

Faiz Ahmed Faiz Poetry

Faiz Ahmed Faiz Poetry

Uth kar to agai hain teri bazam se magar
Kuch dil hi janta hai k kis dil se aaiy hain.

اٹھ کر تو آ گئے ہیں تری بزم سے مگر
کچھ دل ہی جانتا ہے کہ کس دل سے آئے ہیں


Faiz Ahmed Faiz Poetry

Aaiy to yun k jese hamesha the meharbaan
Bhoole to yun k goya kbhi aashna na the .

آئے تو یوں کہ جیسے ہمیشہ تھے مہرباں
بھولے تو یوں کہ گویا کبھی آشنا نہ تھے


Faiz Ahmed Faiz Poetry

Umeed yaar, nazar ka mizaaj, dard ka rung
Tum aaj kuch bhi na poucho
k dil udaas bohat hai

امید یار، نظر کا مزاج، درد کا رنگ
تم آج کچھ بھی نہ پوچھو
کہ دل اداس بہت ہے


Faiz Ahmed Faiz Poetry

Faiz Ahmed Faiz Poetry

Dard itna hai har rug me hai mehshar barpa
Or sikoon aisa k marjane ko ji chahta hai . Faiz Ahmed Faiz Poetry

درد اتنا ہے ہر رگ میں ہے محشر برپا
اور سکوں ایسا کہ مرجانے کو جی چاہتا ہے


Faiz Ahmed Faiz Poetry

Ye eihad tark muhabat hai kis liye aakir
Sukoon qalb idhar bhi nahi idhar bhi nahi .

یہ عہد ترک محبت ہے کس لئے آخر
سکون قلب ادھر بھی نہیں، ادھر بھی نہیں


Faiz Ahmed Faiz Poetry

Chal rahi hai kuch is andaaz se nabz hasti
Donoo alam ka nasha toot raha ho jese.

چل رہی ہے کچھ اس انداز سے نبض ہستی
دونوں عالم کا نشہ ٹوٹ رہا ہو جیسے


Faiz Ahmed Faiz Poetry

Hua hai tujh se bicharne k bad ye maloom
K to nahi that ere sath ek duniya thi.

ہوا ہے تجھ سے بچھڑنے کے بعد یہ معلوم
کہ تو نہیں تھا تیرے ساتھ ایک دنیا تھی


Read Also : Mirza Ghalib Poetry & Shayari
Faiz Ahmed Faiz Shayari

Nigah shoq! Sir bazam hai hijab na ho
Wo be khabar hi sahi, itne be khabar bhi nahi . Faiz Ahmed Faiz Poetry

نگاہ شوق! سر بزم بے حجاب نہ ہو
وہ بے خبر ہی سہی، اتنے بے خبر بھی نہیں


Faiz Ahmed Faiz Shayari

Teri surat se hai aalam me baharon ko sibat
Teri aankhon ke siwa duniya me rakha kya hai.

تیری صورت سے ہے عالم میں بہاروں کو ثبات
تیری آنکھوں کے سوا دنیا میں رکھا کیا ہے


Faiz Ahmed Faiz Shayari

Ye arzo bhi bari cheez hai magar humdam
Wisal yaar faqat aarzo ki bat nahi.

یہ آرزو بھی بڑی چیز ہے مگر ہمدم
وصال یار فقط آرزو کی بات نہیں


Faiz Ahmed Faiz Shayari

Muqaam, faiz! Koi raah me jcaha hi nahi
Jo koi yaar se nikle to soye daar chale.

مقام، فیض! کوئی راہ میں جچا ہی نہیں
جو کوئے یار سے نکلے تو سوئے دار چلے



Faiz Ahmed Faiz Poetry

Thak kar yunhi pal bhar ke liye aankh lagi thi
So kar na uthe ge ye irada to na tha .

تھک کر یونہی پل بھر کے لئے آنکھ لگی تھی
سو کر نہ اٹھیں گے یہ ارادہ تو نہ تھا



Tu ne dekhi hai wo peeshani,
wo zaksara, wo hont
Zindagi jin ke taswur me lota di hum ne .

تو نے دیکھی ہے وہ پیشانی،
وہ رخسار، وہ ہونٹ
زندگی جن کے تصور میں لوٹا دی ہم نے



Suljhaien be dili se ye uljhe huy sawal
Wahan jein ya na jain, na jain k jain hum.

سلجھائیں بے دلی سے یہ الجھے ہوئے سوال
وہاں جائیں یا نہ جائیں، نہ جائیں کہ جائیں ہم



Na jane kis liye umeed waar betha hoon
Ik aesi raah pe jo teri raah guzar bhi nahi.

نہ جانے کس لئے امید وار بیٹھا ہوں
اک ایسی راہ پہ جو تیری راہ گزر بھی نہیں



Faiz Ahmed Faiz Shayari

Me ne is tor se tujhe chaha aksar
Jese muhtab ko be ant samandar chahe . Faiz Ahmed Faiz Shayari

میں نے اس طور سے تجھے چاہا اکثر
جیسے مہتاب کو بے انت سمندر چاہے



Or bhi dukh hain zamane me muhabat k siwa
Rahaten or bhi be wisal ki rahat k siwa.

اور بھی دکھ ہیں زمانے میں محبت کے سوا
راحتیں اور بھی ہے وصل کی راحت کے سوا



Or kya dekhne ko baqi hai
Aap se dil laga ke dekh lya.

اور کیا دیکھنے کو باقی ہے
آپ سے دل لگا کے دیکھ لیا



Donoo jahan teri muhabat me haar
Wo jaraha hai koi shab gum guzar k.

دونوں جہاں تیری محبت میں ہار کے
وہ جارہا ہے کوئی شب غم گزار کے



Teri ranjish ki inteha maloom
Hasratoon ka maeri shumaar nahi . Faiz Ahmed Faiz Shayari

تیری رنجش کی انتہا معلوم
حسرتوں کا مری شمار نہیں


Faiz Ahmed Faiz Shayari

Qafs udaas hai yaaro, saba se kuch to kaho
Kahen to behar khuda aaj zikar yaar chale.

قفس اداس ہے یارو، صبا سے کچھ تو کہو
کہیں تو بہر خدا آج ذکر یار چلے


Faiz Ahmed Faiz Shayari

Saba ne phr dar zindaan pe aake di dastak
Sehar qareeb hai, dil se kaho na gabraiy.

صبا نے پھر در زنداں پہ آکے دی دستک
سحر قریب ہے، دل سے کہو نہ گھبرائے


Faiz Ahmed Faiz Shayari

Wo to wo hai, tumhain hojai gi ulfat mujh se
Ik nazar tum mera mehboob nazar to dekho.

وہ تو وہ ہے، تمہیں ہوجائے گی الفت مجھ سے
اک نظر تم مرا محبوب نظر تو دیکھو



Faiz Ahmed Faiz Shayari

Raat yun dil me teri khoi hui yaad aie
Jise weerane me chupke se bahar aajai.

رات یوں دل میں تری کھوئی ہوئی یاد آئی
جیسے ویرانے میں چپکے سے بہار آجائے



Sir tor ho sir hashar ho,
Hamain intezaar qabool hai
Wo kbhi milen, wo kaheen milen,
Wo kbhi sahi wo kaheen sahi.

سر طور ہو سر حشر ہو،
ہمیں انتظار قبول ہے
وہ کبھی ملیں، وہ کہیں ملیں،
وہ کبھی سہی وہ کہیں سہی



Haan, jo jafa bhi aap ne ki, qaide se ki!
Haan, hum hi kaar hind asool wafa na the .

ہاں، جو جفا بھی آپ نے کی، قاعدے سے کی!
ہاں، ہم ہی کار بند اصول وفا نہ تھے



Janta hai k wo na aaien ge
Phr bhi masroof intezaar hai dil.

جانتا ہے کہ وہ نہ آئیں گے
پھر بھی مصروف انتظار ہے دل



Faiz Ahmed Faiz Poetry

Hum ek umar se waqif hain, ab na samjhao
K lutf kya hai mere meharbaan, sitam kya hai . Faiz Ahmed Faiz Poetry

ہم ایک عمر سے واقف ہیں، اب نہ سمجھاؤ
کہ لطف کیا ہے مرے مہرباں، ستم کیا ہے



Aao k aaj katam hui dastan ishq
Ab katam aashiqi k fasane sunaien hum.

آؤ کہ آج ختم ہوئی داستان عشق
اب ختم عاشقی کے فسانے سنائیں ہم



Muhabat karne waloon ki tijarat bhi anooki hai
Munafa choor dete hain khasare bant lete hain.

محبت کرنے والوں کی تجارت بھی انوکهی ہے
منافع چھوڑ دیتے ہیں خسارے بانٹ لیتے ہیں



Duniya ne teri yaad se begana kardya
Tujh se bhi dil fareeb hain gum rozgaar k.

دنیا نے تیری یاد سے بیگانہ کردیا
تجھ سے بھی دل فریب ہیں غم روزگار کے



Guloon me rung bhare bar no bahar chale
Chale bhi aao k gulshan ka karoobar chale . Faiz Ahmed Faiz Poetry

گلوں میں رنگ بھرے بار نو بہار چلے
چلے بھی آؤ کہ گلشن کا کاروبار چلے



Ab ksi lela ko bhi iqraar mehboobi nahi
In dinoo badnaam hai, hare k deewane ka naam.

اب کسی لیلی کو بھی اقرار محبوبی نہیں
ان دنوں بدنام ہے، ہر ایک دیوانے کا نام



Ye ajeeb qayamaten hain
teri raaheguzar me guzraan
Na hua k mar miteen hum,
na hua k ji uthen hum.

یہ عجیب قیامتیں ہیں
تری راہگزر میں گزراں
نہ ہوا کہ مر مٹیں ہم،
نہ ہوا کہ جی اٹھیں ہم


Post a Comment

Previous Post Next Post